Mirza ghalib sad poetry

0
56

in this article is mirza ghalib sad poetry‘and explain mirza ghalib best poetry,urdu sms text you can easily copy and past and share with friends and family thank you 

(Mirza Ghalib about in urdu)

مرزا غالب (1797-1869) ہندوستان میں مغلیہ سلطنت کے دوران اردو اور فارسی زبانوں کے سب سے مشہور اور بااثر شاعروں میں سے ایک تھے۔ وہ اپنی غزلوں کے لیے مشہور ہیں، جو کہ گیت کی نظمیں ہیں جن کے موضوعات محبت، نقصان اور زندگی کی پیچیدگیوں سے متعلق ہیں۔ غالب کی شاعری اکثر ان کی گہری فلسفیانہ بصیرت اور انسانی جذبات کے گہرے ادراک کی عکاسی کرتی ہے۔

غالب کی شاعری محبت اور رومانس سے لے کر فلسفہ، مذہب اور زندگی کی کشمکش تک وسیع موضوعات پر محیط ہے۔ اس کے اشعار ان کی تصویر کشی، فکر کی گہرائی اور زبان کے پیچیدہ استعمال کے لیے مشہور ہیں۔

غالب کی شاعری میں عام طور پر پائے جانے والے چند موضوعات یہ ہیں:

(mirza Ghalib ki shayari )

(مرزا غالب کی شاعری)

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے
تمہیں کہو کہ یہ انداز گفتگو کیا ہے

نہ شعلہ میں یہ کرشمہ نہ برق میں یہ ادا
کوئی بتاؤ کہ وہ شوخ تند خو کیا ہے

یہ رشک ہے کہ وہ ہوتا ہے ہم سخن تم سے
وگرنہ خوف بد آموزی عدو کیا ہے

چپک رہا ہے بدن پر لہو سے پیراہن
ہمارے جیب کو اب حاجت رفو کیا ہے

جلا ہے جسم جہاں دل بھی جل گیا ہوگا
کریدتے ہو جو اب راکھ جستجو کیا ہے

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل
جب آنکھ ہی سے نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

وہ چیز جس کے لیے ہم کو ہو بہشت عزیز
سوائے بادۂ گلفام مشک بو کیا ہے

پیوں شراب اگر خم بھی دیکھ لوں دو چار
یہ شیشہ و قدح و کوزہ و سبو کیا ہے

رہی نہ طاقت گفتار اور اگر ہو بھی
تو کس امید پہ کہیے کہ آرزو کیا ہے

ہوا ہے شہہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا
وگرنہ شہر میں غالبؔ کی آبرو کیا ہے

mirza ghalib shayari in hindi

Mirza ghalib sad poetry

Phool Gul Shams o Qamar Saare Hi The

Par Humain Un Mai Tumhen Bhaaye Bahut
پھول گل شمس و قمر سارے ہی تھے
پر ہمیں ان میں تمہیں بھائے بہت
फूल गुल शम्स ओ क़मर सारे ही थे
पर हमें उन में तुम्हीं भाए बहुत

Mirza ghalib sad poetry

Na Bandhe Tishnagi-e-Zauq Ke Mazmun ‘Ghalib’
Garche Dil Khol Ke Dariya Ko Bhi Sahil Bandha
نہ بندھے تشنگی ذوق کے مضموں غالبؔ
گرچہ دل کھول کے دریا کو بھی ساحل باندھا
न बंधे तिश्नगी-ए-ज़ौक़ के मज़मूँ ‘ग़ालिब’
गरचे दिल खोल के दरिया को भी साहिल बाँधा

Mirza ghalib sad poetry

Zoaf Se Girya Mubaddal Ba-Dam-e-Sard Hua
Bavar Aaya Hume Pani Ka Hawa Ho Jaana
ضعف سے گریہ مبدل بہ دم سرد ہوا
باور آیا ہمیں پانی کا ہوا ہو جانا
ज़ोफ़ से गिर्या मुबद्दल ब-दम-ए-सर्द हुआ
बावर आया हमें पानी का हवा हो जाना

Mirza ghalib sad poetry

Zindagi Mai To Wo Mehfil Se Utha Dete The
Dekhun Ab Mar Gaye Par Kon Uthata Hai Mujhe
زندگی میں تو وہ محفل سے اٹھا دیتے تھے
دیکھوں اب مر گئے پر کون اٹھاتا ہے مجھے
ज़िंदगी में तो वो महफ़िल से उठा देते थे
देखूँ अब मर गए पर कौन उठाता है मुझे

Mirza ghalib sad poetry

Zindagi Apni Jab Is Shakl Se Guzari ‘Ghalib’
Hum Bhi Kya Yaad Karenge K Khuda Rakhte The
زندگی اپنی جب اس شکل سے گزری غالبؔ
ہم بھی کیا یاد کریں گے کہ خدا رکھتے تھے
ज़िंदगी अपनी जब इस शक्ल से गुज़री ‘ग़ालिब’
हम भी क्या याद करेंगे कि ख़ुदा रखते थे

Zikr Us Pari-Vash Ka Aur Phir Bayan Apna
Ban Gaya Raqib Akhir Tha Jo Raz-Dan Apna
ذکر اس پری وش کا اور پھر بیاں اپنا
بن گیا رقیب آخر تھا جو رازداں اپنا
ज़िक्र उस परी-वश का और फिर बयाँ अपना
बन गया रक़ीब आख़िर था जो राज़-दाँ अपना

Zamana Sakht Kam-Azar Hai Ba-Jaan-e-Asad
Vagarna Hum To Tavaqqo Zyada Rakhte Hain
زمانہ سخت کم آزار ہے بہ جان اسدؔ
وگرنہ ہم تو توقع زیادہ رکھتے ہیں
ज़माना सख़्त कम-आज़ार है ब-जान-ए-असद
वगर्ना हम तो तवक़्क़ो ज़ियादा रखते हैं

Zehar Milta Hi Nahi Mujh Ko Sitamgar Warna
Kya Kasam Hai Tere Milne Ki k Kha Bhi Na Sakun
زہر ملتا ہی نہیں مجھ کو ستم گر ورنہ
کیا قسم ہے ترے ملنے کی کہ کھا بھی نہ سکوں
ज़हर मिलता ही नहीं मुझ को सितमगर वर्ना
क्या क़सम है तिरे मिलने की कि खा भी न सकूँ


Zuban Pe Bar-e-Khudaya Ye Kis Ka Naam Aaya
K Mere Nutq Ne Bosa Mere Zuban Ke Liye
زباں پہ بار خدایا یہ کس کا نام آیا
کہ میرے نطق نے بوسے مری زباں کے لیے
ज़बाँ पे बार-ए-ख़ुदाया ये किस का नाम आया
कि मेरे नुत्क़ ने बोसे मिरी ज़बाँ के लिए

Ye Na Thi Humari Kismat Ki Wisal-e-Yaar Hota
Agar Aur Jeete Rahte Yahi Intezar Hota
یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال یار ہوتا
اگر اور جیتے رہتے یہی انتظار ہوتا
ये न थी हमारी क़िस्मत कि विसाल-ए-यार होता
अगर और जीते रहते यही इंतिज़ार होता

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here